برطانیہ میں پناہ کے متلاشی 200 بچے لاپتا


برطانیہ کے وزیر داخلہ نے پناہ کے متلاشی 200 بچوں کے لاپتا ہونے کا اعتراف کرلیا۔

برطانوی امیگریشن کے وزیر رابرٹ جینرک نے کہا ہے کہ گذشتہ 18 ماہ کے دوران پناہ کے متلاشی 200 بچے لاپتا ہیں۔

فرانسیسی خبر رساں ادارے کے مطابق منگل کو امیگریشن کے وزیر رابرٹ جینرک نے پارلیمان کو بتایا کہ یہ بچے بغیر والدین کے برطانیہ میں موجود ہیں اور ان میں 13 بچوں کی عمریں 16 سال سے کم ہیں جن میں ایک لڑکی بھی شامل ہے۔

امیگریشن کے وزیر رابرٹ جینرک کا کہنا تھا کہ زیادہ تر بچوں کا تعلق البانیہ سے ہے۔

روزنامہ اوبزرور کی رپورٹ کے مطابق جنوبی انگلینڈ کے علاقے برائٹن میں جرائم پیشہ ایک گینگ نے پناہ کے متلاشی ان بچوں کو اغوا کیا ہے۔

امیگریشن کے وزیر رابرٹ جینرک نے تسلیم کیا کہ جولائی 2021 سے 440 لاپتا ہونے کے واقعات ہیں اور پناہ کے متلاشی اپنے ہوٹلوں میں واپس نہیں گئے جہاں وہ رضاکارانہ طور پر مقیم ہیں۔

حکومتی اعدادوشمار کے مطابق ہر سال انگلینڈ اور ویلز میں بچوں کی دیکھ بھال کرنے والے مراکز میں سے دو لاکھ سے زیادہ بچوں کے لاپتا ہونے کے واقعات ریکارڈ ہوتے ہیں۔

Comments




#برطانیہ #میں #پناہ #کے #متلاشی #بچے #لاپتا

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *